Peshawar Afghanon k hathon kaise nikal gya p1

Peshawar Afghanon k hathon kaise nikal gya p1

Peshawar Afghanon k hathon kaise nikal gya p1

پشتو شاعر خوشحال خان خٹک پشاور کے بہت بڑے مداح تھے۔ انہوں نے ایک بار کہا تھا کہ انہیں ہندوستان کے چمیلی کے پھولوں سے زیادہ اپنی مٹی کے کانٹے پیارے ہیں۔ کیونکہ یہ وہی شہر تھا جہاں اس کے دوست رہتے تھے۔ انہوں نے کہا کہ پشاور انہیں دنیا کے تمام شہروں سے زیادہ عزیز ہے۔ یہ وہ شاعر تھا جس نے افغانوں کی آزادی کے لیے بہت قربانیاں دی تھیں۔ نہ صرف خوشحال خان خٹک بلکہ ہر افغان پشاور سے محبت کرتا تھا۔ اسی لیے افغان درانی سلطنت نے اسے اپنا سرمائی دارالخلافہ قرار دیا۔ لیکن پھر افغانوں نے پشاور کو ہمیشہ کے لیے کھو دیا۔

طاقتور درانی سلطنت کا اچانک خاتمہ کیوں ہوا؟ افغان ہیروز کی بہادر سکھ سپاہیوں سے جھڑپ کیوں ہوئی؟ دھمکیوں کا تبادلہ کیوں ہوا اور یہ سب کیسے ختم ہوا؟ شاہ زمان 1793 میں برسراقتدار آئے۔ افغانستان افراتفری کا شکار تھا۔ درانی سلطنت ٹوٹ پھوٹ کا شکار تھی۔ افغانوں نے پنجاب اور سندھ کو کھو دیا تھا۔ یہاں تک کہ شمالی افغانستان بھی کابل حکومت کے کنٹرول سے باہر تھا۔ شاہ زمان کے سوتیلے بھائی محمود مرزا نے بھی ایران سے ان کے خلاف آپریشن کیا۔ ہندوستان میں ایسٹ انڈیا کمپنی کی حکومت بھی شاہ زمان کے خلاف تھی۔

یہ شاہ زمان کے خلاف محمود مرزا کی حمایت کر رہا تھا۔ ایسٹ انڈیا کمپنی ایک وجہ سے شاہ زمان کے خلاف تھی۔ اسے فرانسیسی کمانڈر نپولین کے ہندوستان پر حملے کا خدشہ تھا۔ انگریز شاہ زمان اور ٹیپو سلطان کو نپولین کا حلیف سمجھتے تھے۔ چنانچہ ایسٹ انڈیا کمپنی نے ان دونوں کو معزول کرنے کی کوشش کی۔ انہوں نے سب سے پہلے ٹیپو سلطان کو نشانہ بنایا۔ ٹیپو سلطان انگریزوں کے خلاف لڑتے ہوئے شہید ہوئے۔ اس نے اپنی جان قربان کر دی۔ مئی 1799 میں میسور انگریزوں کے قبضے میں چلا گیا۔ لہٰذا اب ٹیپو سلطان کو کوئی خطرہ نہیں تھا۔ صرف شاہ زمان رہ گیا تھا۔

چنانچہ انگریزوں نے شاہ زمان کو ہٹانے کے لیے محمود مرزا اور ایران سے رابطہ کیا۔ انگریزوں نے ایرانی بادشاہ فتح علی شاہ قاجار کو 10 ہزار رشوت دی تھی۔ تاکہ شاہ زمان کے خلاف ان کی مدد حاصل کی جا سکے۔ ایرانی بادشاہ نے محمود مرزا کو فوج کے ساتھ افغانستان پر حملہ کرنے کے لیے بھیجا۔ مرزا نے قندھار اور ہرات کے شہروں کو نشانہ بنایا۔ حالانکہ شاہ زمان نے اسے ہر جگہ شکست دی۔ لیکن ان کے بھائی کے ساتھ جنگ ​​نے پنجاب میں ان کی مہم کو نقصان پہنچایا۔ شاہ زمان پنجاب کو سکھوں سے واپس لینا چاہتا تھا۔ اس نے بارہا پنجاب پر حملہ کیا لیکن ہر بار مرزا نے اسے افغانستان واپس جانے پر مجبور کیا۔

تاہم، شاہ زمان اور رنجیت سنگھ نے لاہور میں ایک افسانوی جنگ لڑی۔ وہ کیا تھا؟ 1798 میں شاہ زمان نے لاہور کا محاصرہ کیا۔ سکھرچکیا مِل کا رنجیت سنگھ لاہور کا دفاع کر رہا تھا۔ رنجیت سنگھ کے دادا چرت سنگھ نے شاہ زمان کے دادا ابدالی سے جنگ کی تھی۔ اس نے ابدالی کے کمانڈروں کو شکست دی تھی۔ اب دونوں پوتے میدان جنگ میں آمنے سامنے تھے۔ جنگ کے دوران افغان فوجیوں نے قلعہ لاہور کے ایک مینار پر قبضہ کر لیا۔ نوجوان رنجیت سنگھ نے ٹاور پر چڑھ کر سپاہیوں کو قتل کر دیا۔ سکھ لیجنڈ کہتا ہے کہ رنجیت سنگھ نے شاہ زمان کو پنجابی میں چیلنج کیا۔

اس نے کہا کہ ابدلی کے پوتے چرت سنگھ کے پوتے کو ضرور دیکھیں۔ تاہم افغان فوج نے لاہور پر قبضہ کر لیا۔ نوجوان رنجیت سنگھ اپنے سکھ ساتھیوں کے ساتھ شہر سے بھاگ گیا۔ لیکن لاہور پر شاہ زمان کی گرفت زیادہ دیر نہ چل سکی۔ اسے محمود مرزا سے لڑنے کے لیے افغانستان واپس جانا پڑا۔ کابل جاتے ہوئے اس نے دریائے جہلم کو عبور کیا۔ کئی توپیں دریا میں ڈوب گئیں۔ شاہ زمان نے محمود مرزا کو پھر شکست دی۔ محمود مرزا فرار ہو کر ایران چلا گیا۔

Part 2

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *